خوابوں کی حویلی اردو ہے

مختلف شعراء کے مختلف بند پیشِ خدمت ہے...!


اردو ہے مرا نام میں خسروؔ کی پہیلی
میں میرؔ کی ہم راز ہوں غالبؔ کی سہیلی غالبؔ نے بلندی کا سفر مجھ کو سکھایا
حالیؔ نے
مروّت کا سبق یاد دلایا
اقبال نے آئینۂ حق مجھ کو دکھایا
مومن نے سجائی میرےخوابوں کی حویلی اردو ہے مرا نام میں خسرو کی پہیلی
_________ _________ ________ ______
نہ اردو ہے زباں میری نہ انگلش ہے زباں میری زبانِ مادری کچھ بھی نہیں گونگی ہے ماں میری 
_________ ________ ________ _________
نہیں کھیل اے داغ ، یاروں سے کہہ دو
کہ آتی ہے اردو زباں آتے آتے
_________ ________ ________ _______
وسیم بریلوی کا یہ شعر بھی دیکھیے

تمہاری نفرتوں کو پیار کی خوشبو بنا دیتا میرے بس میں اگر ہوتا تجھے اردو سکھا دیتا
 _________ ________ _________ _______
شبینہ ادیب صاحبہ کا ایک شعر

نہ مٹی تھی ، نہ مٹی ہے ، نہ مٹے کی اردو چاہنے والوں کے ہونٹوں پہ رہے گی اردو
 _________ ______ ________ ________
لتا حیا صاحبہ کے چند اشعار

صبح کا پہلا پیام اردو
ڈھلتی ہوئی سی جیسے شام اردو
اتریں جا ں تارے وہیں بام اترو
بڑی کم سِن گلفام اردو
جیسے نئے سال کا یہ دن ہو نیا
اور بیتے سال کی ہو آخری دعا
نیا سال نئی رام رام اردو
تجھے نئی صدی کا سلام اردو
________ _________ ________ ________
ماجد دیوبندی کو بھی سنیے

ذرا میں زیر ہو جاتا ہے دُشمن
وہ اس لہجے میں اردو بولتا ہے
_______ ________ ________ ________
_______ ________ ________ ________
_______ ________ ________ ________
_______ ________ ________ ________
ترتیب و پیشکش عیبدالرحمان عقیل
_______ ________ارریاوی ______ ___
 

نوٹ


"لفظ بولتے ہیں " ویب سائٹ پر شائع ہونے والی تمام نگارشات قلم کاروں کی ذاتی آراء پر مبنی ہیں۔ ادارہ کا ان سے متفق ہونا ضروری نہیں۔


ہمیں فالو کریں

گوگل پلس

فیس بک پیج لائک کریں


بذریعہ ای میل حاصل کریں