سہارا

بسم اللہ الرحمٰن الرحیم 
★سہارا ★

بے چینیوں کی منزل بے تابیوں کی راہیں
کیا ڈھونڈتا ہے اے دل آرام کے سہارے
حیرت سے دیکھتا ہوں مجروح عشرتوں کو
اک صبح ہورہی ہے اک شام کے سہارے

 

یقینا ً آج سے میری ہر صبح  ایک شام کے سہارے شروع ہوتی ہے جب سے میرے ہر سہارے ٹوٹے لیکن صرف اسی کی ذات ہے جس کے سہارے جیئے جارہا ہوں ورنہ کیا مجال کے بکھرے ہوئے موتی کو چنتا اور ٹوٹے خواب کی تعبیر ڈھونڈتا ۔


عبید الرّحمان عقیل ندوی 
 

نوٹ


"لفظ بولتے ہیں " ویب سائٹ پر شائع ہونے والی تمام نگارشات قلم کاروں کی ذاتی آراء پر مبنی ہیں۔ ادارہ کا ان سے متفق ہونا ضروری نہیں۔


ہمیں فالو کریں

گوگل پلس

فیس بک پیج لائک کریں


بذریعہ ای میل حاصل کریں